پڑھو پنجاب بڑھو پنجاب، کا خواب چکنا چور؟

پڑھو   پنجاب    بڑھو    پنجاب، کا خواب چکنا چور؟
جنوری 24 15:55 2017 Print This Article

لاہور(محمد اسد سلیم )  ٹھوکر نیاز بیگ سے  ڈاکٹر ہسپتال  تک تعمیر ہونی والی سڑک بنانے کے لئے حکومت کے پاس مزدورں کی کمی ہوگئی ۔   چائلڈ لیبر ایکٹ کوزیرِِ تعمیر سڑک کے نیچے دفن کرکے ٹھیکیدار نے درجنوں معصوم  بچوں سے  مزدوری کروانا شروع کردی ۔ 8 سے 14 سال کی عمر کے  متعدد  بچے  مصروف گزرگاہ کی تعمیر میں مصروف عمل،  قانون نافذ کرنے والے ادارے بھی خاموش ۔  بچوں کی مزدوری نے  کروڑوں روپے کے فنڈز سے چلنے  پڑھو پنجاب   بڑھو پنجاب   اور  لیبر ڈیپارمنٹ کی کارکرگی پر بھی سوالیہ نشان کھڑا کردیا ۔دی ایجوکیشنٹ سے بات کرتے ہوئے بچوں نے بتایا کہ  ہم تعلیم حاصل کرنا چاہتے ہیں مگر غربت اور گھر والوں کی  خاطر  مزدوری کرنے پر مجبور ہیں، سوال یہ ہے کہ ان معصوم بچوں کو تعلیم کون دلواے گا؟ دی ایجوکیشنسٹ کی حکومت سے فوری ایکشن اور ان بچوں کی تعلیم کا بندوبست کرنے کی اپیل .دی ایجوکیشنٹ کی نشان دئی  پر لیبر ڈیپارٹمنٹ کی کاروائی کرنے کی یقین دہانی کرائی۔

ایک کروڑ بچے چائلڈ لیبر کاشکار ہیں

انٹرنیشنل لیبر آرگنائیزیشن (آئی ایل او) کی ایک رپورٹ کے مطابق پاکستان میں ایک کروڑ بچے چائلڈ لیبر کاشکار ہیں، جو گزشتہ اور موجودہ حکومت، کارکردگی پر ایک سوالیہ نشان ہے۔ ان میں سے زیادہ بچوں کی نعداد صوبہ پنجاب میں ہے۔  تاھم موجودہ اعدادوشمار اکٹھے کرنے کی ضرورت ہے۔
اس ضمن میں صوبائی وزیر برائے مزدوران راجہ اشفاق سرور سے بار ہا رابطہ کرنے کی کوشش کی گئی تاھم ان کا موقف نہ مل سکا۔

Comments

comments

  Categories: