ڈگری یپرائمری اسکولز کی حالت انتہائی مخدوش

ڈگری یپرائمری اسکولز کی حالت انتہائی مخدوش
January 20 18:56 2017 Print This Article

ڈگری (نمائندہ خصوصی  ) تحصیل ڈگری میں بچیوں کے پرائمری اسکولز کی حالت انتہائی مخدوش . کل 76 اسکولز میں سے  14 اسکول بند . دو لاکھ کی قریب کی آبادی میں سے صرف 3400 سے زائد بچیاں ہی سرکاری اسکول میں زیر تعلیم . 43 سے زائد اسکول واش روم 53 اسکولز پانی کی سہولت سے محروم . وزیراعلیٰ سندھ اور وزیر تعلیم نوٹس لیں. تفصیلات کے مطابق تحصیل ڈگری میں بچیوں کے لیے گورنمنٹ پرائمری اسکول کی حالت انتہائی مخدوش ہوچکی ہے .یونین کونسلز میں قائم اسکول کی حالت انتہائی قابل رحم ہوچکی ہے . دو لاکھ کے قریب کی آبادی والے تحصیل ڈگری میں بچیوں کے لیے پرائمری اسکول کی تعداد 76 ہے  سرکاری اسکول میں 3422 بچیاں زیر تعلیم ہیں 76 اسکولز  میں سے 14 اسکول بند ہیں  . جبکہ ایک اسکول گورنمنٹ پرائمری اسکول دیھ 143/B  ایسا اسکول ہےجس میں استانی تو موجود ہے لیکن کوئی بھی بچی داخل نہیں اور نہ ہی کوئی   عمارت ہے  . 53 اسکولز میں پانی کی سہولت میسر نہیں جبکہ 7 اسکولز ایسے ہیں جن میں بچیاں تو زیر تعلیم ہے مگر کوئی کمرہ جماعت نہیں . 43 سے زائد اسکولوں میں واش روم کی سہولت نہیں جبکہ جن اسکولوں میں واش روم موجود ہے ان کی حالت بھی بہت خراب ہے. 80 فی صد اسکولز میں چار دیواری بھی موجود نہیں اور  چودہ اسکولز میں ہی بجلی سہولت موجود ہے . گرلز پرائمری اسکول جوکہ شہری علاقوں میں موجود ہیں ان کی حالت کچھ بہتر ہے جبکہ دیہاتوں میں موجود اسکولز کی حالت کھنڈرات سے کم نہیں . سیاسی رہنماؤں نے اس پر ردعمل دیتے ہوئے پاکستان عوامی تحریک لوئر سندھ کے صدر ندیم احمد نقشبندی قومی عوامی تحریک کے مرکزی رہنما انور نوحانی نے کہا کہ تحصیل ڈگری میں بچیوں کی پرائمری تعلیم کے لیے کوئی سہولت موجود نہیں اسکولوں کی حالت دیکھ کر رونا آتا ہے . اس تحصیل میں بچیوں کی تعلیم پر سب سے زیادہ توجہ دی جاتی ہے یہاں یہ حال ہے باقی جگہ کیا ہوگا . دریں اثناء واش روم نہ ہونے پر ڈی ایم ایس سول ہسپتال ڈگری ڈاکٹر انور کتھری نے خصوصی گفتگو کرتے ہوئے بتایا کہ واش روم نہ ہونے سے موذی امراض و وبائی امراض کا خطرہ ہوتا ہے . بچیوں کے اسکولز میں واش روم نہ ہون اخلاقی طور پر بھی مناسب نہیں اس سے بچیاں ذہنی کرب کا بھی شکار ہوتی ہیں

  یاد رہے کہ  گزشتہ ہفتے وزیرتعلیم جام مہتاب ڈہرکی ہدایت پر ڈپٹی کمشنر میرپورخاص سید مہدی شاہ نے تحصیل ڈگری کی اسکو ل مانٹرینگ کمیٹی تشکیل دی تھی اور کمیٹی کو حکم دیا گیا تھا کہمانٹرینگ کمیٹی میں شامل تمام چئیرمین اپنی اپنی یوسیز اور ٹاؤن کمیٹیوں میں گورنمنٹ بوائز اینڈ گرلزپرائمری اسکولز کا دورہ کرکے اسکول کی عمارت ، چاردیواری ، پینے کے پانی اور واش روم کی حالت زار پر ایک ہفتے میں رپورٹ پیش کریں گے جس کے بعد اس رپورٹ کو مد نظر رکھ کر اسسٹنٹ کمشنر ثناءاللہ صدر ، ٹی ای او میل میر عطاءاللہ ٹالپور ، ٹی او فی میل ششماد بیگم ،اسسٹنٹ انجنئیر ایجوکیشن ورکس سب ڈویژن ڈگری عبدالخالق چنڑ اور سول سوسائیٹی کے رکن آغاروزامان مرغزانی جن اسکولز میں مرمت ، پینے کے پانی کی سہولت، واش روم یا چار دیواری کی تعمیر ناگزیر ہوگی کی سفارشات مرتب کرکے 25جنوری تک ڈپٹی کمشنر سید مہدی شاہ کو پیش کریں گے

Print this entry

Comments

comments

  Categories: