اوکاڑہ یونیورسٹی کی چھانگامانگا میں شجر کاری

اوکاڑہ یونیورسٹی کی چھانگامانگا میں  شجر کاری
August 19 20:55 2019 Print This Article

ایک ایکڑ رقبہ پر 726 سے زائد    جامن ، املتاس، آسٹریلین کیکر اور جاپانی شہتوت کے پودے لگائے گئے

پلانٹ فار پاکستان ڈے کی مناسبت سےمہم میں 100سے زائد طلباء سمیت اساتذہ ،وکلاء  اور صحافیوں نے شرکت کی

ہمیں اپنی نسلوں کی بقا  کےلیے  جنگلات اگانے پہ توجہ دینی چاہیے ، ڈاکٹر   زکریا ذاکر 

للاہور (دی ایجوکیشنسٹ 18اگست 2019،عثمان بے خبر)   یونیورسٹی آف اوکاڑہ اور دی ایجوکیشنسٹ نے پلانٹ فار پاکستان ڈے کے موقع پر چھانگا   مانگا  جنگل میں ایک ایکٹر رقبہ پہ شجرکاری کی۔  حکومتِ پاکستان کی بلین ٹری سونامی مہم کے حوالے سے یونیورسٹی کے 100سے زائد طلباء اور اساتذہ نے ضلعی محکمہ جنگلات اور دی ایجوکیشنسٹ کے ساتھ مل کر 726 پودے لگائے۔

شجر کاری کا آغاز ایک افتتاحی تقریب سے ہوا جس میں یونیورسٹی آف اوکاڑہ کے وائس چانسلر پروفیسر ڈاکٹر محمد زکریا ذاکر کی نمائندگی کرتے ہوئے ڈائریکٹر ہارٹی کلچر ڈاکٹر فہیم ارشد  اور افسر تعلقات عامہ  شرجیل احمد  نے ایک پودا لگایا   ۔ اس موقع پر  اسسٹنٹ کمشنر چونیاں سردار شبیر احمد ڈوگر، ڈویژنل  فارسٹ آفیسر قصور  عمران ستار، ایس ڈی او فارسٹ آغا حسین، ممبران فارسٹ پروٹیکشن کمیٹی چھانگا مانگا ، ایڈیٹر دی ایجوکیشنسٹ  ڈاکٹر  شبیر سرور ، جوائنٹ ایڈیٹر دی ایجوکیشنسٹ ڈاکٹر اےآرساجد، چودھری محمد شریف چدھڑ سابقہ چئیرمین  بھوئے آصل عابد چدھڑ  اور یونیورسٹی  کی طلباء تنظیم دی ریجوائسرز کلب  اور دفتر تعلقاتِ عامہ  کے تعاون سے 120 طلباء نےشرکت کی۔

یونیورسٹی آف اوکاڑہ کے وائس چانسلر پروفیسر ڈاکٹر محمد زکریا ذاکر  نے اپنے  خصوصی پیغام میں کہا کہ  ” درخت ماحول کو صاف ستھرا رکھنے کے ساتھ ساتھ ماحولیاتی نظام کے توازن کو برقرار رکھنے میں اہم کردار ادا کرتے ہیں۔ ہمیں اپنی آنے والی نسلوں کی بقا کو یقینی بنانے  کےلیے زیادہ سے زیادہ جنگلات اگانے پہ توجہ دینی چاہیے۔  کرہِ ارض پہ رونما ہونے والی ماحولیاتی تبدیلیاں پاکستان میں بے حد برے اثرات مرتب کر رہی ہیں اور ان سے بچاؤ کے لیے بڑے پیمانے پر سبزہ اور جنگلات اگانے کی ضرورت ہے”۔

یونیورسٹی کے ڈائریکٹر ہارٹی کلچر ڈاکٹر فہیم ارشد نے کہا کہ گزشتہ ایک عشرے کے دوران پاکستان میں جنگلات کے کٹاو نے ماحولیاتی نظام کو درہم برہم کر دیا ہے۔ اس عمل کو ہر قیمت پر روکا جانا چاہیے۔یونیورسٹی کے ترجمان شرجیل احمد  نے کہا کہ  یونیورسٹی نے لوئر باری دوآب اور نہر کے کنارے اور کیمپس کے اندر بڑے پیمانے پر پھول دار پودے اور سایہ دار درخت اگانے کے ساتھ ساتھ  25 ایکڑ رقبہ گھاس اگانے کے لیے مختص  کر دیا ہے ۔

اس موقع پریونیورسٹی آف اوکاڑہ کے وائس چانسلر پروفیسر ڈاکٹر محمد زکریا ذاکر کے نام سے پودا لگانے کے بعد دعا کی گئی جس کے بعد تمام طلباء ایک ایکڑ سے زائد رقبہ پر پھیل گئے اور ہر طالبعلم  نے دو یا اس سے زائد پودے لگائے جن میں شہتوت، جامن ، املتاس، آسٹریلین کیکر اور جاپانی شہتوت شامل تھے ۔ بعد ازاں طلباء کو چھانگا مانگا پارک، ٹرین کی سواری کرائی  گئی ۔ طلباء جھیل میں کشتی رانی سے بھی لطف اندوز ہوئے۔

Print this entry

Comments

comments

  Categories: