پنجاب یونیورسٹی: امتحانی نتائج میں تاریخ رقم، بی اے/بی ایس سی رزلٹ کا 42 دن میں اعلان

پنجاب یونیورسٹی: امتحانی نتائج میں تاریخ رقم، بی اے/بی ایس سی رزلٹ کا 42 دن میں اعلان
July 31 18:30 2019 Print This Article

 

علی احمد لطیف

لاہور ( رپورٹ: علی احمدلطیف) پنجاب یونیورسٹی نے 31جولائی کو بی اے/بی ایس سی سالانہ 2019 کے نتائج کا اعلان کردیا،جامعہ کی 19 سالہ تاریخ میں پہلی بار 42 دن میں نتائج کا اعلان کیا گیا ہے۔ اس سلسلےمیں بی اے /بی ایس سی کے پوزیشن ہولڈر طلبہ کیلئے تقریب تقسیم انعامات منعقد کی گئی۔تقریب کا انعقاد جامعہ کےالرازی ہال میں کیا گیا، وائس چانسلر پنجاب یونیورسٹی ڈاکٹر نیاز احمد اخترنےبطورمہمان خصوصی شرکت کی اورنمایاں پوزیشن حاصل کرنے والی طالبات میں انعامات تقسیم کئے۔
بی اے / بی ایس سی کی پوزیشن ہولڈر طالبات نےاپنی اس کامیابی کاسہرا والدین اوراساتذہ کے سر باندھتے ہوئے مستقبل میں تعلیمی شعبے میں اہم کردار ادا کرنےکی خواہش کا اظہار کیا۔ مجموعی طور پر پہلی پوزیشن حاصل کرنے والی طالبہ نوشابہ ظفر نے مسرت کے اس موقع پراپنے مرحوم والد کی کمی کوشدید محسوس کیا۔ طالبہ نوشابہ طفر نے بی ایس سی میں 714نمبر حاصل کئے اور انکا  تعلق چکوال سے جبکہ بی اے میں 646  نمبر لیکر اول پوزیشن حاصل کرنے والی طالبہ طوبیٰ افضل  لاہورکی رہائشی ہے۔ قائم مقام کنڑولرامتحانات کے مطابق اول ،دوئم اورسوئم پوزیشن حاصل کرنے والی طالبات کو بالترتیب 1 لاکھ، 75 ہزار اور 65 ہزار کا کیش انعام دیا جائے گا۔

وائس چانسلرپنجاب یونیورسٹی پروفیسر نیاز احمدنے کہا کہ دونوں ڈگریوں میں طلبہ کاپوزیشن حاصل کرناپبلک اورپرائیوٹ سیکٹرکی باہمی کوشش ہے،جبکہ پوزیشن ہولڈرطالبات کو پنجاب یونیورسٹی میں داخلہ لینے کی ترغیب دیتے ہوئے انھیں سکالر شپ دینے اور داخلہ فیس کے بغیر کسی بھی شعبے میں جانےکیلئےہر ممکن سہولیات فراہم کرنے کی یقین دہانی بھی کروائی۔
وائس چانسلر نے پوزیشن ہولڈر طالبات کے والدین و اساتذہ کو انکی محنت پر سراہتے ہوئے کہا کہ وہ  بچے بہت خوش قسمت ہیں کہ پاکستان کی نمبرون یونیورسٹی سے انھوں نے پوزیشن حاصل کی ہیں۔ جبکہ دونوں ڈگریوں میں لڑکیوں کے پوزیشن لینے پر وائس چانسلر نے لڑکوں کو تلقین کی کہ وہ بھی لڑکیوں کی طرح محنت کرکے پوزیشن حاصل کریں۔

وائس چانسلر کا کہنا تھا کہ خواتین بہت محنت کرتی ہیں اور تعلیمی میدان میں اعلیٰ پوزیشنز لے رہی ہیں اسی لئے انہیں آگے بڑھ کر ملکی ترقی میں اپنا بھرپور کردار ادا کرنا چاہئے۔ انہوں نے کہا کہ کوئی بھی معاشرہ خواتین کی شمولیت کے بغیر ترقی نہیں کر سکتا۔

 

وی سی نے مزید کہا کہ  شعبہ امتحانات نے مقررہ وقت سے ایک ماہ پہلے نتائج جاری کئے ، جس پر کنٹرولر اور انکی ٹیم شاباش کی مستحق ہیں،ڈاکٹر نیاز احمد نے شعبہ امتحانات کی کارکردگی کو سراہتے ہوئے انھیں 5 لاکھ روپے انعام دینے کا بھی اعلان کیا جبکہ اسی کارکردگی اور ٹیکنالوجی کی مدد سے اگلے سال مزید کم وقت میں امتحانی نتائج جاری کرنے پر بھی زور دیا۔

تقریب سے خطاب کرتے ہوئے قائمقام کنٹرولر امتحانات رؤف نوازنے کہا کہ  جامعہ پنجاب کی 19 سالہ تاریخ میں پہلی بارایسا ہوا ہےکہ اپریل میں لیے جانے والے امتحانات کےپرچےاتنی قلیل مدت میں چیک کئے گے ہیں۔ ہم نے پہلی دفعہ صرف 42 دن میں نتائج تیار کئے ہیں، اس سے پہلے صرف دو بار جولائی میں نتائج کا اعلان کا کیا گیا مگر وہ امتحانات فروری یا مارچ میں لیے گے تھے۔

انھوں نے کہا کہ اس سال 373 کالجز کے42569 ریگولر اور 42968 پرائیوٹ امیدواروں نےامتحان دیا جنکےلیے78 شہروں میں 691 امتحانی مراکز بنائے گے  اور6 ہزار ممتحنوں نے امتحانی ڈیوٹیاں سرانجام دیں جبکہ 7 ہزار اساتذہ نے پرچے چیک کئےہیں۔

یاد رہے پنجاب یونیورسٹی کے زیر اہتمام بی اے/بی ایس سی سالانہ امتحانات2019ء میں کل2,06,626امیدواروں نے شرکت کی جس میں سے93,829امیدوار کامیاب ہوئے جبکہ کامیابی کا تناسب45.41فیصد رہا۔بی اے /بی ایس سی سالانہ امتحانات2019ء پارٹ ون میں کل1,18,539امیدواروں نے شرکت کی جس میں سے50,475امیدوار کامیاب ہوئے جبکہ کامیابی کا تناسب42.58فیصد رہا۔بی اے /بی ایس سی سالانہ امتحانات2019ء پارٹ ٹو میں کل85,537امیدواروں نے شرکت کی جس میں سے41,581امیدوار کامیاب ہوئے جبکہ کامیابی کا تناسب 48.61فیصد رہا۔

Print this entry

Comments

comments