پنجا ب یو نیو ر سٹی کے کنٹر یکٹ ملا ز مین کا ا حتجا ج ۔ جا ئیں تو جا ئیں کہا ں!

پنجا ب یو نیو ر سٹی کے کنٹر یکٹ ملا ز مین کا ا حتجا ج ۔ جا ئیں تو جا ئیں کہا ں!
May 18 14:25 2018 Print This Article

گو ر نر پنجا ب ملک رفیق ر جو ا نہ کا رپو ر ٹ پہ ر دِ عمل، کہا یہ ا ندرونی مسئلہ ہے وائس چانسلر خود قانون کے مطابق حل کریں

رپو ر ٹ:سنیا لو د ھی

لا ہو ر(۱۸مئی،بروز جمعہ،۲۰۱۸)پنجا ب یو نیو رسٹی ۶۰۰ سے زا ئد کنٹر یکٹ ملا ز مین کے مسئلہ کو حل کر نے کے لئے اخبا را ت میں ا شتہا ر
د ے گی ا و ر اِ ن ملا ز مین کو مقا بلے کے تحت مستقل ملا ز مت کا مو قع فر ا ہم کیا جا ئے گا۔ذرائع کے مطا بق گو ر نر پنجا ب نے پنجا ب
یو نیو رسٹی ا نتظا میہ کو ہد ا یا ت دیں ہیں کہ یہ اِن کا ا ند رو نی مسئلہ ہے و ہ اسے خو د قا نو ن کے مطا بق حل کر یں ۔
ٌتفصیلا ت کے مطا بق پنجا ب یو نیو ر سٹی و ا ئس چا نسلر ڈا کٹر نا صرہ جبیں ا و ر ر جسٹر ار محمد خا لد خا ن نے منگل کے روز گو ر نر ہاو ئس میں گو ر نر پنجا ب ملک ر فیق ر جوا نہ سے ملا قا ت کی او ر پنجا ب یو نیو ر سٹی میں بغیر ا شتہا ر دئیے ۶۰۰ کے قر یب کنٹر یکٹ ملا ز مین کے مسئلہ کو بیا ن کیا ۔جسں پر گو ر نر نے تما م کنٹر یکٹ ملا ز مین کا ر یکا ر ڈ طلب کیا تھا ۔و ا ئس چا نسلر پنجا ب یونیو ر سٹی نے رجسٹر ا ر خا لد خا ن اور ایڈ یشنل رجسٹرا ر (۱) جلیل طا ر ق ا یڈ یشنل رجسٹر ا ر (۲)ملک ظہیر احمد کو ریکا ر ڈ تیا ر کر نے کے احکا ما ت جا ری کئے۔پنجا ب یو نیو ر سٹی کے اساتذہ کنٹر یکٹ ملا ز مین دیگر سٹا ف نے اپنے کنٹر یکٹ کو ریگو لر کروانے کا مطا لبہ کیا تھا ۔جس پر نظر ثا نی کی جا ر ہی ھے ۔ملا ز مین کو اس مسئلہ کی وجہ سے بہت سے مسا ئل کا سا منا کرنا پڑ ا ہے۔طا ہر محمد شکو ر (ا کا وٌنٹ آفیسر )نے اپنے معا شی حا لا ت کا تذکر ہ کیا اُن کے ا ہل خا نہ کو بہت مشکلات ہو رہی ہیں۔

جا ئیں تو جا ئیں کہا ں!

تفصیلا ت کے مطا بق دی ا یجو کیشنسٹ سے کنٹر یکٹ ملا ز مین نے با ت کر تے ہو ئے ا پنے مو قف د ئیے جس میں ا نہو ں نے کہاپنجا ب یو نیو ر سٹی کے گر یڈ۱ تا۷ ۱ کے کنٹر یکت ملا ز مین ا و ر ا سا تذہ گذشتہ۱۵سا ل سے ر یگو لرہو نے کی آس و ا مید لگا ئے ا پنی عمر کے ا س حصے میں چکے ہیں جہا ں ا ن کی خد ما ت کو گو ر نمنٹ ا دار ے قبو ل کرنے سے قا صر ہیں ۔و ہاں آج ۱۵سا ل کے بعد یو نیو ر سٹی ا نتظا میہ کو بھر تیو ں کے طر یقہ کا ر کا خیا ل آیا؟حا لا نکہ و قت نے ثا بت کیا کہ یہ تما م ملا ز مین ا نتہا ئی قا بل اور محنتی تھے و ر نہ ا نتظا میہ شر و ع کے کنٹر یکٹ میں ہی ا ن کو فا رغ کر دیتی۔
ٓا تنے طو یل عرصے سے ا ن کو ملا ز مت پر ر کھنا ا س با ت کی دلیل ہے کہ یہ غلط نہیں ہیں ا لبتہ ا نتظا می ا مو ر میں کو تا ہیاں ا و ر لغزشیں ہیں اور نا
ا ہل لو گو ں کو ا یسی ا ہم جگہو ں پر بٹھایا گیا ہے جنہو ں نے سوا ئے سیا ست کر نے کے کا م تو جہ نہیں دی۔یہی و جہ ہے کہ ا ن لو گو ں نے عر صہ
دراز سے کنٹر یکٹ ملا ز مین کو ر یگو لر کر نے کی کو ئی کو شش نہیں جس کی سزا ہم کنٹر یکٹ ملا زمین بھگت رہے ہیں ۔ہما را ا حتجا ج روز ا و ل سے
پر ا من ہے اور ہم کا فی عر صہ سے سرا پا ا حتجا ج ہیں کہ ہم جا ئیں تو جا ئیں کہا ں اتنے طو یل عرصے کے دوران یو نیو ر سٹی ا نتظا میہ نے
کیو ں ا ن آ سا میو ں کے ریگو لر نہیں کیا جب کنٹر یکٹ ملا ز مین ا تنے عر صے سے ا مید لگا ئے بیٹھے ہیں کہ ا ب ہی ا ن کو ر یگو لر کر دیا جا ئے لیکن
ا چا نک بغیر و جہ بے رو ز گا ر کر د ینا کسی بھی ذی شعو ر معا شر ے کی رو ا یا ت کے خلا ف ہے اس سے نہ صر ف ہما ر ی ا پنی فیملی کے سا تھ کمٹمینٹس
متا ثر ہو ئی ہیں بلکہ مو جو د ہ معا شی صو ر ت حا ل کے پیش نظر ہما ر ی بد حا لی وا ضح دکھا ئی دے رہی ہے ۔
’’ہم ا پیل کرتے ہیں کہ ا س سا ر ے و ا قعے کی تحقیقا ت کر ا ئی جا ئیں کہ ا ن آ سا میو ں پر طو یل عر صے سے کا م کر نے و ا لو ں کو ہٹا کر سیا سی و
ما لی مقا صد پیش خیمہ تھے ؟ہما ر ے تجر با ت ا و ر قا بلیت کے مطا بق ا یسا طر یقہ کا ر و ا ضع کیا جا ئے کہ ہم با عز ت حلا ل رو زی کما سکیں ا ور ا پنے بچو ں کی تعلیم ا ور و ا لد ین کی خد مت ا دا کر سکیں ۔

Print this entry

Comments

comments