عجوکا تھیڑنے چیئرنگ کراس کی تاریخ پر روشنی ڈالی

March 12 21:08 2018 Print This Article

گواہی دیتا ہوں چیئرنگ کراس یہ ہے

چیئرنگ کراس پیارے یہ ہے چیئرنگ کراس

لاہور(سعدیہ نورین ) الحمراء آرٹ کونسل میں عجوکا تھیٹرکی طرف سے ڈرامہ پیش کیا گیا جس کا نام چیئرنگ کراس تھا۔ اس ڈرامہ میں بتایا گیا کہ چیئرنگ کراس ایک چوراہا ہےجہاں شہر کی بڑی شاہراہیں آپس میں ملتی ہیں جہاں قسم قسم کے لوگ طرح طرح کے جلوس، دھواں پھیلاتی کاریں اور بسیں، گورنروں اور وزیروں کے قافلے ایک دوسرے سے ٹکراتے ہیں یہاں ماضی حال سے اور حال مستقبل سے گلے ملتا ہے۔ چیئرگ کراس ایک ایسا قلعہ ہےجس پرانتہا پسندی، آمریت اور گلوبلائزیشن نے چاروں طر ف سے حملے کئے۔ چیئرنگ کراس گواہ ہے ان تاریخی واقعات کا جنہوں نے ہماری قومی شناخت کو ترتیب دیا ہے۔

ڈرامے کی کہانی انقلاب ، آمریت، خاتون کی بے راہ روی اورچیئرنگ پہ نسب ملکہ وکٹوریا کے مجسمہ کے گرد گھومتی ہے۔ کس طرح دھرنے اور تحریکوں نے پاکستان کی ترقی میں رکاوٹ پیدا کی اورکس طرح آمر حکمرانوں نے جمہوریت کو نقصان پہنچایا۔

ڈرامے کے لکھاری شاہد ندیم نے خطاب کرتے ہوئے کہا کہ میں نے پوری کوشش کی ہے چیئرنگ کراس کی اہمیت اور پاکستان کی تاریخ کواجاگر کرنے کی ، وہ تاریخ جو چیئرنگ کراس کے گرد گھومتی ہے۔  ڈرامے چیئرنگ کراس کے تمام کرداراپنے آپ میں ایک مثال ہیں جس میں محرین عمران، حناء طارق، قمر خان، نبیل بٹ، فہد علی اور عمران اصغر قابل ذکر ہیں۔

Print this entry

Comments

comments