پنجاب یونیورسٹی کی بچوں پر جنسی تشدد کے خلاف آگاہی مہم

پنجاب یونیورسٹی کی بچوں پر جنسی تشدد کے خلاف آگاہی مہم
January 16 10:35 2018 Print This Article

لاہور(سٹاف رپورٹ):پنجاب یونیورسٹی کے ماہرین کا بچوں پر جنسی تشدد کے خلاف آگاہی مہم کے لئے قصور کا دورہ۔ وائس چانسلر پنجاب یونیورسٹی پروفیسر ڈاکٹر زکریا ذاکر کی ہدایت پر پنجاب یونیورسٹی کے سماجی و نفسیاتی ماہرین پر مبنی محققین کے ایک وفد نے قصور کا دورہ کیا ۔ پنجاب یونیورسٹی کے ماہرین بشمول محمد ارشد عباسی، عالیہ خالد، سعدیہ شعیب اور طلباء و طالبات نے مختلف سکولوں اور کالجوں کا دورہ کیا اور بچوں اور اساتذہ میں بچوں پر جنسی تشدد کے واقعات کی روک تھام کے لئے آگاہی پیدا کی۔ اس موقع پر محققین نے موجودہ حالات کا بھی جائزہ لیا ۔ اپنے دورے کے دوران وفد نے ڈپٹی کمشنر قصور، چیف ایگزیکٹو آفیسر ایجوکیشن ، ڈپٹی ڈسٹرکٹ آفیسر سوشل ویلفئیرسے بھی ملاقاتیں کیں ۔

مزیدبرآںبچوں پر جنسی تشدد کے خلاف آگاہی مہم میں اکیڈیما کے کردار پر وائس چانسلر ڈاکٹر زکریا ذاکر نے تمام صدور شعبہ جات کااجلاس بھی منعقدکیاجس میں چیئرمین پنجاب ہائر ایجوکیشن کمیشن ڈاکٹر نظام الدین مہمان خصوصی تھے۔

ڈاکڑنظام نےحاضرین سے خطاب میں کہا کہ جب تک سماجی مسائل پر سائنسی انداز میں تحقیق نہیں کریں گے ہمارے سماجی مسائل حل نہیں ہوں گے اور قصور جیسے واقعات کی روک تھام نہیں ہو سکے گی۔  تقریب کی صدارت وائس چانسلر پروفیسر ڈاکٹر زکریا ذاکر نے کی۔ اجلاس سے خطاب کرتے ہوئے ڈاکٹر نظام الدین نے کہا کہ ہمیں انسانی حقوق کے بہتر طور پر سمجھنے کے لئے سماجی و ثقافتی اقدار پر غیر جانبداری کے ساتھ تحقیق کرنی چاہئے تاکہ حقیقی حالات سے آگاہی حاصل کی جاسکے۔ انہوں نے کہا کہ ہمارے معاشرے میں بعض موضوعات پر بات نہیں کی جاسکتی تاہم ان موضوعات پر بات ہونی چاہئے۔

انہوں نے کہا کہ انسانی حقوق کا نظریہ حضرت محمد ﷺ نے خطبہ حجتہ الوداع کے موقع پر دیا۔ انہوں نے کہا کہ ہمیں فیملی ویلیوز کو سمجھنے اور اور تربیت دینے کی ضرورت ہے۔ انہوں نے کہا کہ ہمیں انتہا پسندی کی تعریف کرنے کی اور اس کی وجوہات جاننے کی بھی ضرورت ہے۔ انہوں نے کہا کہ پنجاب ہائر ایجوکیشن کمیشن ایسے موضوعات پر کی جانے والی تحقیق کی فنڈنگ کرے گا۔

تقریب سے خطاب کرتے ہوئے وائس چانسلر پنجاب یونیورسٹی پروفیسر ڈاکٹر زکریا ذاکر نے کہا کہ قصور جیسے افسوسناک واقعات پوری دنیا میں ہوتے ہیں اور یہ ایک عالمی مسئلہ ہے۔ انہوں نے کہا کہ قصور جیسے واقعات سے نمٹنے کے لئے تمام شعبہ جات مل کر تحقیق کریں گے کیونکہ یہ ہماری بقا کا مسئلہ ہے۔ انہوں نے کہا کہ ایسے سماجی مسائل پر حکومت کو پالیسی دیں گے اور سول سوسائٹی اور میڈیا میں آگاہی پیدا کریں گے۔ انہوں نے کہا کہ پنجاب یونیورسٹی ایسے مسائل کو حل کرنے کے لئے بھرپور کردار ادا کرے گی۔ انہوں نے کہا کہ پنجاب یونیورسٹی انتظامیہ نے سماجی و نفسیاتی ماہرین پر مبنی ایک ٹیم بھی قصور روانہ کی ہے تاکہ سائنسی انداز میں حقائق جانے جا سکیں اور آگاہی پیدا کی جاسکے ۔ بعد ازاں صدور شعبہ جات نے مسائل کے حل کیلئے تجاویز و سفارشات پیش کیں۔

Print this entry

Comments

comments