سیکرٹری سکول ایجوکیشن پنجاب ڈاکٹر اللہ بخش ملک کا سکول کی دیوارگرنےسے طالبعلم کی ہلاکت کاسخت نوٹس

سیکرٹری سکول ایجوکیشن پنجاب ڈاکٹر اللہ بخش ملک کا سکول کی دیوارگرنےسے طالبعلم کی ہلاکت کاسخت نوٹس
November 18 10:23 2017 Print This Article
لا ہور (سٹاف رپورٹ) محکمہ سکول ایجوکیشن کی جا نب سے پنجاب ایجوکیشن فا ونڈیشن کے زیرنگرانی چلنے وا لے پرا ئیویٹ سکول احمد سکول ایجوکیشن سسٹم بہاولپور کی بیرونی دیوار کے گرنے کی وجہ سے متعدد طلبہ کے زخمی ہو نے اور ایک طا لبعلم کی ہلاکت کے وا قعہ کا سختی سے نوٹس لیتے ہو ئے صوبے کے 36 اضلاع میں قا ئم ڈسٹرکٹ ایجوکیشن اتھارٹیز کے چیف ایگزیکٹوآفیسر ان کو تمام نجی و سرکاری سکولوں میں طلبہ و طالبات کی سکیورٹی اور دیگر حفاظتی انتظامات کو یقینی بنانے کے لیے ضروری اقدامات کا نوٹیفکیشن جاری کر دیا گیا۔
مراسلے کے مطابق سیکرٹری سکول ایجوکیشن پنجاب ڈاکٹر اللہ بخش ملک کی طرف سے احکامات دیے گئے ہیں کہ تمام اضلاع کے سی۔ای اوز ایجوکیشن اپنے ضلع میں قائم سرکاری و نجی سکولوں میں طلبہ کی حفاظت اور سکیورٹی کو یقینی بنایا جا ئے ۔ سی۔ای ۔ او سکولوں کی بیرونی و اندرونی ہر طرح کے حفاظتی اقدامات کوتسلی بخش سمجھتے ہو ئے متعلقہ سکول کو سر ٹیفکیٹ بھی جاری کیا جا ئے۔ طلبہ و طالبات کے لیے ضروری حفاظتی اقدامات نہ ہونے کی صورت میں سکول کی رجسٹریشن منسوخ کر تے ہو ئے محکمہ کی جانب سے بند کر دیا جا ئے گا۔ مرا سلے کے مطابق سی ای اوز کو احکامات جا ری کیےگئے ہیں کہ نئی رجسٹریشن کے حصول سے پہلے ڈسٹرکٹ ایجوکیشن اتھارٹی متعلقہ سکول کی تعمیری حالت، استحکام و مضبوطی اور دیگر اہم امور کو سکول مالکان کی جانب سے مکمل کر نے پر رجسٹریشن جا ری کی جا ئے۔
 ا ن تمام امور کو مکمل نہ کر نے وا لے سکولوں کو رجسٹریشن ہر گز جا ری نہ کی جا ئے گی۔ مراسلے میں یہ بھی کہا گیا ہے کہ خطرناک عمارتوں میں موجودسکولوں میں طلبہ و طا لبات سے متعلق کسی بھی نو عیت کی سرگرمیوں کی اجازت نہیں کی دی جا ئے گی اور نہ ہی طلبہ کو اندر جا نے کی اجازت ہو گی۔خطرناک وخستہ حال عمارتوں اور خستہ حال بیرونی دیوروں کے حامل سکولوں کو پورے صوبے میں طلبہ و طالبات کی حفاظت کو مد نظر رکھتے ہو ئے اولین بنیادوں پر مرمت اور دوبارہ تعمیر بھی کیا جا ئے گا۔بجلی کی لٹکتی تاروں ، سکولوں میں موجود بجلی کے کھمبوں اور بجلی سے چلنے والی موٹروں کی مکمل طور پر طلبہ کی پہنچ سے دور اور انکی مرمت کے احکامات بھی جا ری کیے گئے ہیں ۔ مراسلے کے مطابق سرکاری و نجی سکولوں میں طلبہ کے لیے پینے کے صاف پانی اور واٹر محفوظ کرنے والے ٹینکوں کی مکمل صفائی کے ساتھ ساتھ ڈینگی سے بچاو کے لیے پانی کی لیکج کا بھی حاص خیال رکھا جا ئے۔ چھٹی کے اوقات میں تمام سکول طلبہ و طالبات کے محفوظ اور پر امن طر یقے سے انخلاء کو یقنی بنا تے ہو ئے روزانہ کی بنیاد پر مر کرزی دروازے پر ایک ٹیچر کی ڈیوٹی لگا ئی جا ئے گی۔
بچوں کی آمد روفت کے لیے سکول بسوں اور دیگر نو عیت کی سکول ٹرانسپورٹ کو مکمل طور پر فٹنس سرٹیفکیٹ اور با قائدگی سے مرمت و دیکھ بھال کا رکھنا ضروری قرار دیا جا تا ہے۔ مراسلے میں ایجوکیشن اتھارٹی کے افسران کو احکامات پر عمل درآمد یقینی بنانے اور محکمے کو ایک ہفتے کے اندر اند ر رپورٹ بھیجنے کا پا بند بنا گیا ہے۔ سیکرٹری سکول ایجوکیشن پنجاب ڈاکٹر اللہ بخش ملک نے بتایا کہ جاری کیے گئے احکاما ت پر کسی بھی صورت دبا و نہیں برداشت کیا جا ئے گا اور عمل درآمد کو یقینی رکھا جا ئے گا۔ تمام سرکاری و نجی سکولوں کی بیرونی دیواروں کی اونچائی کم از کم 8 فٹ ہو نی چاہیے۔ سرکاری سکولوں میں کوئی ایسا ادارہ موجود نہیں ہے جس کی عمارت خستہ حال یا خطرناک حالت میں ہو۔ محکمہ اس حوالے سے نجی سکولوں کا سروے کر وایا جا رہا ہے۔ خستہ حال سکولوں اور دیوروں کی مرمت کی مد میں محکمہ نے 57 بلین روپے کا بجٹ تعمیراتی کاموں کے لیے جاری کر دیا گیا ہے اور اپریل سے پہلے تمام سکولوں کی دیوریں آٹھ فٹ تک ہو جا ئیں گی۔خطرناک عمارتوں میں چلنے وا لے سرکاری و نجی سکولوں کو فوری طور پر بند کر دیا جائے گا۔

Print this entry

Comments

comments