شہری کا طلبا تنظیموں کے خاتمے کے لیے وزیراعلی پنجاب اور چیف جسٹس لاہور ہائی کورٹ کو خط ۔

شہری کا طلبا تنظیموں کے خاتمے کے لیے وزیراعلی پنجاب اور چیف جسٹس لاہور ہائی کورٹ کو خط ۔
اپریل 27 16:33 2017 Print This Article

 

 روزانہ کی بنیاد پر ہونے والی جھڑپوں اور فسادات کی وجہ سے تعلیمی  نظام میں بے ضابطگی اور خلیج پیدا ہو رہا ہیں۔ خط کا متن

کالجوں میں اور خاص طور پر پنجاب یونیورسٹی  پر سخت چیک اینڈ بیلنس رکھا جائے۔ متن

لاہور (محمد اسد سلیم):پنجاب بھر کے جامعات میں طلبا تنظیمیں ختم کروانے کے لیےلاہور ہائی کورٹ کے وکیل چوہدری سلیم نے وزیراعلی پنجاب اور چیف جسٹس لاہور ہائی کورٹ کو خط لکھ دیا ۔ خط میں یہ موئقف اختیار کیا گیا ہے کے  طلبا یونیورسٹیوں میں تعلیم کی بجائے سیاست کررہے ہیں جو کہ غلط ہے   بلوچ طلبا ، جمیعت ،انصاف سٹوڈنٹ وغیرہ کے  روزانہ کی بنیاد پر ہونے والی جھڑپوں اور فسادات کی وجہ سے تعلیمی  نظام میں بے ضابطگی اور خلیج پیدا ہو رہا ہیں۔ان المناک واقعات کی وجہ سے اساتذہ، طلباء اور ان کے والدین کے درمیان فاصلے  پیدا ہوتے ہیں ۔ان نام نہاد طلبا تنظیموں کیمنفی سرگرمیوں کی  وجہ سے   تعلیمی معیار میں کمی  ہمارے تعلیمی اداروں کے لیئے ایک  کلنک بن چکی ہے ۔  ۔پنجاب  یونیورسٹی کی موجودہ صورتحال کو دیکھتے ہوئے تنظیم سازی پر فوری پابندی عائد کی جائے۔

 اس سنگین معاملے کو حل کرنے کے لئےآپ کے کالجوں میں اور خاص طور پر پنجاب یونیورسٹی جوکہ نام نہاد طلبا تنظیموں کا گڑھ بن چکی ہے اس میں سخت چیک اینڈ بیلنس رکھے۔ 

خط میں گزشتہ دنوں پیش آئے مشعال خان کیس کا بھی حوالہ دیا گیا ہے ۔خط کی کاپی چیف جسٹس لاہور ہائی کورٹ, وزیراعلی پنجاب سمیت وائس چانسلر  پنجاب یونیورسٹی کع بھیجی گئی ہے ۔

 

Comments

comments

  Categories: