چارسالہ بی۔ایس پروگرام فوری نافذالعمل نہیں ۔ صوبائی وزیر رضاعلی گیلانی

چارسالہ بی۔ایس پروگرام فوری نافذالعمل نہیں ۔ صوبائی وزیر رضاعلی گیلانی
مارچ 30 19:05 2017 Print This Article

پنجاب ہائر ایجوکیشن کمیشن خود مختار ادارہ ہے، باہمی مشاورت کے بعد حتمی فیصلہ کیا جائے گا۔

لاہور(علی ارشد سے) ہائر ایجوکیشن کمیشن پاکستان کی جانب سے ۲۰۱۸ اور۲۰ ۲۰ سے دو سالہ بی۔اے اور ماسٹرڈگری پروگرام ختم کرنے کے حوالے سے پنجاب ہائر ایجوکیشن کمیشن کا اعلٰی سطح اجلاس  صوبائی وزیر برائے اعلی تعلیم رضا علی گیلانی کی صدارت میں ارفہ کریم ٹاور میں ہوا۔

اجلاس میں چئرمین پنجاب ہائر ایجوکیشن کمیشن ڈاکٹر محمد نظام الدین،  ہائر ایجوکیشن ڈیپارٹمنٹ پنجاب اور پی۔ایچ۔ای۔سی کے اعلی افسران سمیت وائس چانسلر گورئمنٹ کالج یونیورسٹی ڈاکٹر حسن امیر شاہ، وائس چانسلر لاہور کالج فار ویمن یونیورسٹی ڈاکٹر رخسانہ کوثر، پرنسپل گورئمنٹ کالج ٹاون شپ ڈاکٹر اعجاز بٹ، پرنسپل کنیئرڈ کالج رخسانہ ڈیوڈ  نے شرکت کی۔
اجلاس میں سرکاری کالجوں اور یونیورسٹیوں میں موجود سہولیات اور ایچ ای سی کے خط کا جائزہ لیا گیا۔

اجلاس کے بعدصحافیوں کو بریفنگ دینے کا وقت سہ پہر ۴ بجے مقرر تھا  تاہم   وقت کی پابندی نہ ہو سکی اور صحافیوں کے مسئلہ اُٹھانے پر ۴:۴۵ پر صوبائی وزیر برائے اعلی تعلیم رضا علی گیلانی، چئرمین پنجاب ہائر ایجوکیشن کمیشن ڈاکٹر محمد نظام الدیناور وائس چانسلر گورئمنٹ کالج یونیورسٹی ڈاکٹر حسن امیر شاہ کے ہمراہ کمرہ اجلاس سے باہر آئے۔

26 سرکاری کالجوں میں چار سالہ پروگرام خاطر خواہ نتائج فراہم نہیں کررہا

وزیر برائے اعلی تعلیم نے کہا کہ پنجاب میں چار سالہ ڈگری پروگرام کا نفاذ کیا جائے گا لیکن اس سے پہلے ہمیں اپنے سسٹم کے نقائص دور کرکے مزید بہتر کرنا ہوگا ، اس حولے سے کالجز اور یونیورسٹیز کے ساتھ مشاورتی اجلاس جاری رہیں گے۔ انکا مزید کہنا تھا کہ ۲۶ سرکاری کالجز میں چار سالہ بی۔ایس پروگرام جاری کیا گیا ہے مگر بدقسمتی سے وہ خاطر خواہ نتائج فراہم نہیں کررہے۔ فیکلٹی، انفرا سٹکچر اور جدید لیبارٹریوں کی کمی کا سامنا ہے جن کو پورا کرنے کی کوشش کی جا رہی ہے۔
ایک سوال کے جوا ب میں رضا علی گیلانی نے کہا کہ پنجاب میں ۲۸۰۰ لیکچررز کی تقرری کا معاملہ روکا نہیں گیا بلکہ مارکیٹ میں جن مضامین کی اشدضرورت ہے اس حولے سے تقرریاں زیر غور ہیں۔ ڈائریکٹر کالجز کی تعیناتی کو ۴ اپریل تک مکمل کر لیا جائے گا۔

Comments

comments